Hindi Kavita
گوپال داس نیرج
Gopal Das Neeraj
 Hindi Kavita 
 Hindi Kavita

Gopal Das Neeraj

Gopal Das Neeraj (4 January 1924- ) is among the best-known poets in Hindi literature. He was born in the small village Puravali of Etawah in Uttar Pradesh, India. Some of his poetical works are Pran Geet, Aasavari, Neeraj Ki Paati, Geet Ageet, Dard Diya Hai, Badlon Se salaam Leta Hoon and Kaarvan Gujar Gaya. He also wrote songs for several Hindi Movies.

گوپال داس نیرج

گوپال داس نیرج (4 جنوری 1924 -) ہندی ادب کے جانے مانے شائروں میں سے ہیں۔ انکا جنم اتر پردیش کے اٹاوا ضلع کے گانو پراولی میں ہوا ۔ انکی شاعری کی کتابوں میں درد دیا ہے، آساوری، بادلوں سے سلام لیتا ہوں، گیت جو گائے نہیں، نیرج کی پاتی، نیرج دوہاولی، گیت-اگیت، کارواں گزر گیا، پشپ پارجات کے، کاویانجلِ، نیرج سنچین، نیرج کے سنگ-کویتا کے سات رنگ، بادر برس گیو، مکتکی، دو گیت، ندی کنارے، لہر پکارے، پران-گیت، پھر دیپ جلیگا، تمھارے لیے، ونشیوٹ سونا ہے اور نیرج کی گیتکائیں شامل ہیں۔ گوپال داس نیرج نے کئی نامور فلموں کے گیتوں کی رچنا بھی کی ہے۔

گوپالداس نیرج کی رچنائیں

انکی یاد ہمیں آتی ہے
او ہر صبح جگانے والے
اب تم روٹھو، روٹھے سب سنسار
اب تو مذہب کوئی ایسا بھی چلایا جائے
اندھیار ڈھل کر ہی رہے گا
آدمی کو پیار دو
سوپن جھرے پھول سے (کارواں گزر گیا)
سانسوں کے مسافر
سیج پر سادھیں بچھا لو
ہم تیری چاہ میں اے یار
ہائکو
ہے بہت اندھیار اب سورج نکلنا چاہیئے
کھگ ! اڈتے رہنا جیون بھر
خوشبو سی آ رہی ہے ادھر ظعفران کی
چلتے-چلتے تھک گئے پیر
چھپ-چھپ اشرو بہانے والو
جب بھی اس شہر میں کمرے سے میں باہر نکلا
جلاؤ دیئے پر رہے دھیان اتنا
جتنا کم سامان رہے گا
تن تو آج سوتنتر ہمارا
تب میری پیڑا اکلائی
تمام امر میں اک اجنبی کے گھر میں رہا
تمر ڈھلیگا
تم جھوم جھوم گاؤ
تم دیوالی بنکر جگ کا تم دور کرو
تمھارے بنا آرتی کا دییا یہ
دیپ اور منشی
دییا جلتا رہا
دوہے
دھرا کو اٹھاؤ، گگن کو جھکاؤ
ناری
نیرج گا رہا ہے
پیار کی کہانی چاہیئے
پریم کو ن دان دو
پریم-پتھ ہو ن سونا کبھی اسلیئے
پیر میری، پیار بن جا
پھول پر ہنسکر اٹک تو
بند کرو مدھو کی رس-بتییاں
بے شرم سمی شرما ہی جائیگا
مگر نٹھر ن تم رکے
مانو کوی بن جاتا ہے
مسکراکر چل مسافر
مکتک (بادلوں سے سلام لیتا ہوں)
مجھکو یاد کییا جائیگا
میرا اتہاس نہیں ہے
میرا گیت دییا بن جایے
میں اکمپت دیپ پرانوں کا لیئے
میں طوفانوں مے چلنے کا عادی ہوں
وشو چاہے یا ن چاہے

Gopal Das Neeraj Poetry in Urdu

Aadmi Ko Pyar Do
Ab To Mazhab Koi Aisa
Ab Tum Rootho Roothe Sab Sansar
Andhiyar Dhal Kar Hi Rahega
Band Karo Madhu Ki Ras-Batian
Besharam Samay Sharma Hi Jayega
Chalte Chalte Thak Gaye Pair
Chhip Chhip Ashru Bahane Walo
Deep Aur Manushay
Dhara Ko Uthao
Diya Jalta Raha
Dohe
Hai Bahut Andhiyar Ab
Haiku
Ham Teri Chah Mein Ai Yaar
Khag Udte Rehna Jeevan Bhar
Khushboo Si Aa Rahi Hai Idhar
Jab Bhi Is Shehar Mein Kamre Se
Jalao Diye Par Rahei Dhayan Itna
Jitna Kam Saaman Rahega
Magar Nithur Na Tum Rukey
Main Akampit Deep
Main Toofano Mein Chalne Ka Aadi Hoon
Manav Kavi Ban Jata Hai
Mera Geet Diya Ban Jaye
Mera Itihas Nahin Hai
Mujhko Yaad Kiya Jayega
Muktak (Badlon Se Salaam)
Muskurakar Chal Musafir
Nari
Neeraj Ga Raha Hai
O Har Subah Jagane Wale
Payar Ki Kahani Chahiye
Peer Meri Payar Ban Ja
Phool Par Hanskar Atak
Prem Ko Na Daan Do
Prem Path Ho Na Soona
Sanson Ke Musafir
Sej Par Saadhen Bichha Lo
Swapan Jhare Phool Se (Karvan Guzar Gaya)
Tab Meri Peera Akulaai
Tamam Umar Main Ik Ajnabi Ke Ghar
Tan To Aaj Sawtantar Hamara
Timir Dhalega
Tum Diwali Bankar
Tumhare Bina Aarti Ka Diya
Tum Jhoom Jhoom Gao
Unki Yaad Hamein Aati Hai
Vishav Chahe Ya Na Chahe