Hindi Kavita
دشینت کمار
Dushyant Kumar
 Hindi Kavita 
 Hindi Kavita

Dushyant Kumar

Dushyant Kumar (September 27, 1931-December 31, 1975) was born at Navada Village of Bijnor District in Uttar Pradesh. He got his M.A. degree in Hindi from Allahabad. Dushyant Kumar wrote poems, dramas, short stories, novels and ghazals. He is well known for his collection of ghazals ‘Saaye Mein Dhoop’. His other poetical works are Pehli Pehchan, Surya Ka Swagat, Aawazon Ke Ghere and Jalte Huye Van Ka Vasant. Dushyant Kumar is a poet of common man. His poetry is like a bitter medicine for society. His language is very simple but meaningful. Dushyant Kumar remains optimistic while writing about the ignorance, timidity, fears and pains of the people. Many new poets get inspiration from him.

دشینت کمار

دشینت کمار (ستمبر 27، 1931-دسمبر، 1975) کا جنم اتر پردیش کے بجنور ضلعے کے نوادا گانو میں ہوا ۔ انھوننے ایم.اے. ہندی کی پڑھائی اﷲ آباد سے کی۔ انھوننے بہت سی کوتاییں، ناٹک، لگھُ کہانیاں، ناول اور غزلیں لکھیں ۔ انکا غزل-سنگریہہ ''سایے میں دھوپ'' بہت لوک-پرء ہے ۔ انکی اور کاوی رچناییں ہیں : سوری کا سواگت، آوازوں کے گھیرے، جلتے ہئے ون کا وسنت اور ایک کنٹھ وشپایی (کاوی ناٹکا) ۔ وہ عامَ لوگوں کے شاعر ہیں اور انکی شاعری سماج کے لئے کڑوی دوا ہے ۔ وہ لوگوں کی اگیانتا، ڈر اور دکھوں کی بات کرتے ہئے بھی آشاوادی بنے رہتے ہیں۔ وہ کئی نیے شائروں کے لئے بھی رہنما ہیں۔

سایے میں دھوپ دشینت کمار

اگر خدا ن کرے سچ یہ خواب ہو جائے
اپاہج ویتھا کو وہن کر رہا ہوں
افواہ ہے یا سچ ہے یہ کوئی نہیں بولا
اب کسی کو بھی نظر آتی نہیں کوئی درار
آج سڑکوں پر لکھے ہیں سینکڑوں نعرے ن دیکھ
آج ویران اپنا گھر دیکھا
اس ندی کی دھار میں ٹھنڈی ہوا آتی تو ہے
اس راستے کے نام لکھو ایک شام اور
ایک کبوتر چٹھی لیکر پہلی-پہلی بار اڑا
ایک گڑییا کی کئی کٹھپتلییوں میں جان ہے
حالاتِ جسم سورتے جاں اور بھی خراب
ہو گئی ہے پیر پروت-سی پگھلنی چاہیئے
ہونے لگی ہے جسم میں جمبش تو دیکھیئے
کہاں تو تی تھا چراغاں ہریک گھر کے لئے
کہیں پے دھوپ کی چادر بچھاکے بیٹھ گئے
کسی کو کیا پتہ تھا اس ادا پر مر مٹینگے ہم
کیسے منظر سامنے آنے لگے ہیں
کھنڈہر بچے ہئے ہیں عمارت نہیں رہی
گھنٹییوں کی گونج کانوں تک پہنچتی ہے
چاندنی چھت پے چل رہی ہوگی
جانے کس-کسکا خیال آیا ہے
زندگانی کا کوئی مقصد نہیں ہے
تمہارے پانووں کے نیچے کوئی زمین نہیں
تمکو نہارتا ہوں صبح سے رتمبرا
تمنے اس تالاب میں روہو پکڑنے کے لیئے
تونے یہ ہرسنگار ہلاکر برا کییا
دیکھ دہلیج سے کائی نہیں جانے والی
دھوپ یہ اٹھکھیلییاں ہر روز کرتی ہے
نظر-نواز نظارہ بدل ن جائے کہیں
پک گئی ہیں آدتیں، باتوں سے سر ہونگی نہیں
پرندے اب بھی پر تولے ہئے ہیں
پرانے پڑ گئے ڈر پھینک دو تم بھی
پھر دھیرے-دھیرے یہاں کا موسم بدلنے لگا ہے
بہت سنبھال کے رکھی تو پائیمال ہئی<
باییں سے اڑکے دائیں دشا کو گرڑ گیا
باڑھ کی سمبھاونائیں سامنے ہیں
بھوکھ ہے تو صبر کر، روٹی نہیں تو کیا ہوا
مت کہو اکاش میں کوہرا گھنا ہے
مرنا لگا رہے گا یہاں جی تو لیجیئے
میرے گیت تمہارے پاس سہارا پانے آئینگے
میں جسے اوڑھتا-بچھاتا ہوں
یہ سچ ہے پانووں نے بہت کشٹ اٹھائے
یہ شفق شام ہو رہی ہے اب
یہ سارا جسم جھککر بوجھ سے دوہرا ہوا ہوگا
یہ جباں ہمسے سی نہیں جاتی
یہ جو شہتیر ہے پلکوں پے اٹھا لو یارو
یہ دھئیں کا ایک گھیرا کہ میں جسمیں رہ رہا ہوں
یہ روشنی ہے حقیقت میں ایک چھل لوگو
روز جب رات کو بارہ کا گجر ہوتا ہے
لفظ ایہساس-سے چھانے لگے یہ تو حد ہے
وو آدمی نہیں ہے مکمل بیان ہے
وو نگاہیں صلیب ہیں

آوازوں کے گھیرے دشینت کمار

انوکول واتاورن
آگ جلتی رہے
آج
آوازوں کے گھیرے
ایک یاترا-سنسمرن
سانسوں کی پردھی
سوکھے پھول : اداس چراغ
کون-سا پتھ
درشٹانت

Saaye Mein Dhoop Dushyant Kumar

Aaj Sarkon Par Likhe Hain Sainkron Naare Na Dekh
Aaj Veeran Apna Ghar Dekha
Ab Kisi Ko Bhi Nazar Aati Nahin Koi Daraar
Afvah Hai Ya Sach Hai Yeh Koi Nahin Bola
Agar Khuda Na Kare Sach Ye Khwab Ho Jaye
Apahij Vyatha Ko Vahan Kar Raha Hoon
Baarh Ki Sambhavnaen Saamne Hain
Bahut Sambhal Ke Rakhi To Payemaal Hui
Bayen Se Ur ke Dayin Disha ko Garur Gaya
Bhookh Hai To Sabar Kar Roti Nahin To Kya Hua
Chandni Chhat Pe Chal Rahi Hogi
Dekh Dahleej Se Kaai Nahin Jane Wali
Dhoop Ye Athkheliyan Har Roz Karti Hai
Ek Guriya Ki Kai Kathputliyon Mein Jaan Hai
Ek Kabootar Chitthi Lekar Pahli Pahli Baar Ura
Ghantiyon Ki Goonj Kaano Tak Pahunchti Hai
Halaate Jism Soorte Jan Aur Bhi Kharab
Ho Gayi Hai Peer Parvat-Si Pighalni Chahiye
Hone Lagi Hai Jism Mein Jumbish To Dekhiye
Is Nadi Ki Dhaar Mein Thandi Hawa Aati To Hai
Is Raaste Ke Naam Likho Ek Shaam Aur
Jaane Kis Kis Ka Khayal Aaya Hai
Kahan To Tay Tha Chiragan Harek Ghar Ke Liye
Kahin Pe Dhoop Ki Chadar Bichhake Baith Gaye
Kaise Manzar Saamne Aane Lage Hain
Khandhar Bache Hue Hain Imaarat Nahin Rahi
Kisi Ko Kya Pata Tha Is Ada Par Mar Mitenge Ham
Lafaj Ehsaas Se Chhane Lage Ye To Had Hai
Main Jise Orhta Bichhata Hoon
Marna Laga Rahega Yahan Ji To Lijiye
Mat Kaho Aakash Mein Kohra Ghana Hai
Mere Geet Tumhare Paas Sahara Pane Aayenge
Nazar Nawaz Nazara Badal Na Jaye Kahin
Pak Gai Hain Aadten Baaton Se Sar Hongi Nahin
Parinde Ab Bhi Par Tole Hue Hain
Phir Dheere-Dheere Yahan Ka Mausam Badalne Laga Hai
Purane Par Gaye Dar Phenk Do Tum Bhi
Roz Jab Raat Ko Barah Ka Gajar Hota Hai
Toone Yeh Harsingar Hilakar Bura Kiya
Tumhare Paon Ke Neeche Koi Zamin Nahin
Tumko Niharta Hun Subah Se Ritambra
Tumne Is Talab Mein Rohu Pakarne Ke Liye
Wo Aadmi Nahin Hai Mukkamal Bayan Hai
Wo Nigahen Salib Hain
Yeh Dhuen Ka Ek Ghera Ki Main Jis Mein Rah Raha Hoon
Yeh Jo Shahteer Hai Palkon Pe Utha Lo Yaaro
Yeh Roshni Hai Haqeeqat Mein Ek Chhal Logo
Yeh Saara Jism Jhukkar Bojh Se Duhra Hua Hoga
Yeh Sach Hai Panvon Ne Bahut Kashat Uthae
Yeh Shafaq Shaam Ho Rahi Hai Ab
Yeh Juban Hamse Si Nahin Jaati
Zindgani Ka Koi Maqsad Nahin Hai

Aawazon Ke Ghere Dushyant Kumar

Aag Jalti Rahe
Aaj
Aawazon Ke Ghere
Anukool Vatavaran
Drishtaant
Ek Yatra Sansmaran
Kaun Sa Path
Sanson Ki Pridhi
Sookhe Phool Udaas Chiragh